Wednesday, 26 February 2014

Pin It

Widgets

Mera Nahi Tou Woh Apna He Kuch Khayal Karey

Kuch Khayal Karay

    مرا نہیں تو وہ اپنا ھی کچھ خیال کرے
    اُسے کہو کہ تعلق کو پھر بحال کرے

    ملے تو اتنی رعایت عطا کرے مجھ کو
    مرے جواب کو سُن کر کوئی سوال کرے

    کلام کر کہ مرے لفظ کو سہولت ھو
    ترا سکوت مری گفتگو محال کرے

    نۂ گزرے وقت کا پوچھے نہ آنے والے کا
    کوئی سوال کرے بھی تو حسب حال کرے

    وہ ھونٹ ھوں کہ تبسم، سکوت ھو کہ سُخن
   ترا جمال ھر اک رنگ میں کمال کرے

    بلندیوں پہ کہاں تک تجھے تلاش کروں
    ھر ایک سانس پہ عمر ِرواں زوال کرے

    نگاہِ یار نہ ھو تو نکھر نہیں پاتا
کوئی جمال کی جتنی بھی دیکھ بھال کرے

    میں اُس کا پھول ھوں نیر سو اُس پہ چھوڑ دیا
   .....وہ گیسوؤں میں سجائے کہ پائمال کرے

Mera Nahi Tou Woh Apna He Kuch Khayal Karay
Usay Kaho Keh Ta'alluq Ko Phir Bahaal Karay

Milay Tou Itni Riayat  Ataa Karay Mujh Ko
Merey Jawab Ko Sun Kar Koi Sawaal Karay

Kalaam Kar, Ke'h Meray Lafz Ko Sahoolat Ho
Tera Sakoot Meri Guftagoo Muhaal Karay

Na Guzrey Waqt Ka Poochey Na Aaney Waley Ka
Koi Sawaal Karey Bhi Tou Hasb-E-Haal Karay

Woh Hont Hon K Tabassum, Sakoot Ho Ke'h Sukhan
Tera Jamal Har Ik Rung Mein Kamaal Karay

Bulandiyon Pe Kahan Tak Tujhe Talash Karon
Har Aik Saans Pe Umr-E-Rawaan Zawaal Karay

Nigah-E-Yaar Na Ho Tou Phir Nikhar Nahi Pata
Koi Jamaal Ki Jitni Bhi Daikh Bhaal Karay

Mein Us Ka Phool Hoon Nayyar So Us Pe Chorr Diya
Woh Gaisoowon Mein Sajaey Ke'h Paaiemaal Karay.....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.