Monday, 3 February 2014

Pin It

Widgets

Ragon Mein Dorrtey Phirney K Hum Nahi Qayal

Phir Lahoo Kia

      ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے
تم ہی کہو کہ یہ اندازِ گفتگو کیا ہے

نہ شعلے میں یہ کرشمہ نہ برق میں یہ ادا
کوئی بتاؤ کہ وہ شوخِ تند خو کیا ہے

یہ رشک ہے کہ وہ ہوتا ہے ہم سخن تم سے
وگرنہ خوفِ بد آموزیِ عدو کیا ہے

چپک رہا ہے بدن پر لہو سے پیراہن
ہمارے جَیب کو اب حاجتِ رفو کیا ہے

جلا ہے جسم جہاں، دل بھی جل گیا ہوگا
کریدتے ہو جو اب راکھ جستجو کیا ہے

رگوں میں دوڑتے پھرنے کے ہم نہیں قائل
جب آنکھ سے ہی نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے

وہ چیز جس کے لیے ہم کو ہو بہشت عزیز
سوائے بادۂ گلفامِ مشک بو کیا  ہے

پیوں شراب اگر خم بھی دیکھ لوں دو چار
یہ شیشہ و قدح و کوزہ و سبو کیا ہے

رہی نہ طاقتِ گفتار اور اگر ہو بھی
تو کس امید پہ کہیے کہ آرزو کیا ہے

ہوا ہے شہ کا مصاحب پھرے ہے اتراتا
.....وگرنہ شہر میں غالبؔ کی آبرو کیا ہے 

Har Aik Baat Pay Kehtey Ho K Tum Keh  Tu Kia Hai
Tumhi  Kaho  Keh Yeh Andaz-e-Guftugoo  Kia  Hai

Na Sholay Mein Yeh Karishma Na Barq Mein Yeh Adaa
Koi Batao Keh Woh Shokh-e-Tand Khoo Kia Hai

Yeh Rashk Hai Keh Woh Hota Hai Hum Sukhan Tum Se
Wagarna Khof-e-Bad Aamzo-e-Adoo Kia Hai

Chipak Raha Hai Bdan Par Lahoo Se Pairahan
Hamari Jaib Ko Ab Hajat-e-rafoo Kia Hai

Jala Hai Jism Jahan Dil Bhi Jal Gaya Hoga
Kuraidtey Ho Jo Ab Raakh Justujoo Kia Hai

Ragon Mein Dorrtey Phirney K Hum Nahi Qayal
Jo Aankh Se He Na Tapka Tou Phir Lahoo Kia Hai

Woh Cheez Jis K Liye Hum Ko Behasht Azeez
Siwaey Bada-e-Gulfaam Mushkboo Kia Hai

Piyon Sharaab Agar Kham Bhi Dekh Loon Do Chaar
Yeh Sheesha-o-Qadah-O-Kooza-O-Saboo Kia Hai

Rahi Na Taqat-e-Guftaar Aur Agar Bhi Ho
Tou Kis Umeed Par Kahieye Keh Aarzoo Kia Hai

Hua Hai Shay Ka Masahib Phiray Hai Itrata
Wagarna Shehar Mein Galib Ki Aabroo Kia Hai….

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.