Thursday, 13 February 2014

Pin It

Widgets

Un K Aasaar Judaie Ki Khabar Daitey Hein

Judaie Ki Khabar

اَشک دَر اَشک ، دُہائی کا ثمر دیتے ہیں
اُن کے آثار ، جدائی  کی  خبر دیتے ہیں

غالباً یہ مرے چپ رہنے کا خمیازہ ہے
تجھ کو آواز مرے شام و سَحَر دیتے ہیں

مسکرا کر مجھے دے دیتے ہیں وہ اِذنِ فرار
پر مری ذات  کو اَندر سے  جکڑ  دیتے ہیں

چند اِحباب ، مسیحائی کا وعدہ  کر کے
زَخم کو کھود کے,  بارُود سا بھر دیتے ہیں

ایک بے نام اُداسی نے مجھے گھیر لیا
خشک پلکوں سے وُہ آج اِذنِ سفر دیتے ہیں

لفظ مردہ ہیں ، لغت کوئی اُٹھا کر دیکھو
صرف جذبات ہی لفظوں کو اَثر دیتے ہیں

وادیٔ حُسن کے نقاش ، شریر اِتنے ہیں
چشمِ گمراہ کو بھی راہ گزر دیتے ہیں

آپ کیا دیتے ہیں اِس حُسن کی رَعنائی کو
جس کے دیدار کو ہم خونِ جگر دیتے ہیں

ساقیئ مستِ اَلست اَپنی پہ آ جائیں تو
اِک نظر دیکھ کے میخانے کو بھر دیتے ہیں

چشمِ مرشد ہی نہیں چشمۂ فیضانِ بشر
.....قیس کچھ دَستِ حنائی بھی نظر دیتے ہیں


Ashk Dar Ashk, Duhaie Ka Samar Daitey Hein
Un K Aasaar,  Judaie Ki Khabar Daitey Hein

Galiban Yeh Meray Chup Rehney Ka Khumyaza Hai
Tujh Ko Awaaz Meray Shamo-O-Sehar Daitey Hein

Muskura Kar Mujhe De Daitey Hein Woh Izn-E-Faraar
Par Meri Zaat Ko Andar Se Jakarr Daitey Hein

Chand Ehbaab, Masihaaie Ka Wada Kar K
Zakhm Ko Khod K, Barood Sa Bhar Daitey Hein

Aik Be-Naam Udasi Ne Mujhe Ghair Liya
Khushk Palko’n Se Woh Aaj Izn-E-Safar Daitey Hein

Lafz Murda'h Hein, Lugat Koi Utha Kar Daikho
Sirf  Jazbaat He  Lafzon Ko  Asar Daitey  Hein

Wadiy-E-Husn K Naqqash Shareer Itney Hein
Chashm-E-Gumrah Ko Bhi Rah Guzar Daitey Hein

Aap Kia Daitey Hein Is Husn Ki Ranaie Ko
Jis K Didaar Ko Hum Khoon-E-Jigar Daitey Hein

Saqiye Must Alust Apni Pe Ajaen Tou
Ik Nazar Daikh K Maikhaney Ko Bhar Daitey Hein

Chashm-E-Murshid He Nahi Chashma-E-Faizan-E-Bashar
Qais Kuch Dast-E-Hinaie Bhi Nazar Daitey Hein..............


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.