Tuesday, 25 February 2014

Pin It

Widgets

Woh Rut Bhi Aaie K Mein Phool Ki Sahaili Hui

Phool Ki Sahaili

وہ رُت بھی آئی کہ میں پھول کی سہیلی ہوئی
مہک میں چمپا کلی، روپ میں چنبیلی ہوئی

وہ سرد رات کی برکھا سے کیوں نہ پیار کروں
یہ رُت تو ہے مرے بچپن کی ساتھ کھیلی ہوئی

زمیں پہ پائوں نہیں پڑ رہے تکبر سے
نگارِ غم کوئی دُلہن نئی نویلی ہوئی

وہ چاند بن کے مرے ساتھ ساتھ چلتا رہا
میں اس کے ہجر کی راتوں میں کب اکیلی ہوئی

جو حرفِ سادہ کی صورت ہمیشہ لکھی گئی
.....وہ لڑکی تیرے لیے کس طرح پہیلی ہوئی

Woh Rut Bhi Aaie K Mein Phool Ki Sahaili Hui
Mehak Mein Champa Kali, Roop Mein Chanbeli Hui

Woh Sard Raat Ki Barkha Se Kiun Na Piyar Karon
Yeh Rut Tou Hai Merey Bachpan K Sath Khaili Hui

Zameen Pe Paaon Nahi Parr Rahey Takabbur Se
Nigar-E-Gham Koi Dulhan Nai Nawaili Hui

Woh Chaand Ban K Merey Sath Sath Chalta Raha
Mein Us K Hijar Ki Raton Mein Kab Akaili Hui

Jo Harf Sada'h Ki Soorat Hamesha Likhi Gai
Woh Larrki Teray Liye Kis Tarha Paheli Hui...

 .
Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.