Friday, 21 February 2014

Pin It

Widgets

Wohi Qissay Hein Wohi Baat Purani Apni

Raam Kahani Apni

وہی قصے ہیں وہی بات پرانی اپنی
کون سنتا ہے بھلا رام کہانی اپنی

ہر ستمگر کو یہ ہمدرد سمجھ لیتی ہے
کتنی خوش فہم ہے کمبخت جوانی اپنی

روز ملتے ہیں دریچے میں نئے پھول کھلے
چھوڑ جاتا ہے کوئی روز نشانی اپنی

تجھ سے بچھڑے ہیں تو پایا ہے بیاباں کا سکوت
ورنہ  دریاؤں  سے ملتی تھی  روانی  اپنی

قحطِ پندار کا موسم ہے سنہرے لوگو
کچھ  تیز کرو اب کے گرانی  اپنی

دشمنوں سے ہی اب غمِ دل کا مداوا مانگیں
دوستوں نے تو کوئی بات نہ مانی اپنی

آج پھر چاند افق پر نہیں ابھرا محسن
آج پھر رات نہ گزرے گی سہانی اپنی......


Wohi Qissay Hein Wohi Baat Purani Apni
Kon Suntan Hai Bhala Raam Kahani Apni

Har Sitamgar Ko Yeh Hamdard Samajh Leti Hai
Kitni Khush Feham Hai Kambakht Jawani Apni

Roz Miltey Hein Dareechay Mein Naey Phool Khiley
Chorr Jata Hai Koi Roz Nishani Apni

Tujhse Bichrrey Hein Tou Paya Hai Bayabaa’n Ka Sakoot
Warna Daryao’n Se Milti Thi Rawani Apni

Qeht-E-Pindaar Ka Mosam Hai Sunehray Logo
Kuch Taiz Karo Ab K Giraani Apni

Dushmano Se He Ab  Gham-E-Dil Ka Madava Mangey
Doston Ne Tou Koi Baat Na Maani Apni

Aaj Phir Chaand Ufaq Par Nahi Ubhra Mohsin
Aaj Phir Raat Na Guzrey Gi Suhani Apni..........


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.