Monday, 3 March 2014

Pin It

Widgets

Azal Se Shehar Mein Khaali Makaan Thay Hum Jaisay

Khaali Makaan Thay

خود اپنے سائے پہ بار گراں تھے ہم جیسے
کھلا کہ شہر میں بس رائیگاں تھے ہم جیسے

ہمیں سے شب کے اندھیرے لپٹ کے سوئے تھے
کھلی جو دھوپ تو خود بے اماں تھے ہم جیسے

زمیں کے تن پہ ہمارے لہو کی چادر تھی
خود اپنی ذات میں اک آسماں تھے ہم جیسے

ہمارے پاوں تلے موج مارتا تھا فرات
یہ اور بات کہ تشنہ دہاں تھے ہم جیسے

یہ تاج و تخت رہے اپنی ٹھوکروں میں سدا
کہ سرفراز ِ صلیب و سناں تھے ہم جیسے

ہمارے دل میں اترتی تھیں آفتیں محسن
...ازل سے شہر میں خالی مکاں تھے ہم جیسے




Khud Apne Saey Pe Bar-E-Giraan Thay Hum Jaisay
Khula Ke'h Shehar Mein Bus Raaigaan Thay Hum Jaisay

Hami Se Shab K Andheray Lipat K Soey Thay
Khuli Jo Dhoop Tou Khud Be-Imaan Thay Hum Jaisay

Zameen K Tan Pe Hamarey Lahoo Ki Chadar Thi
Khud Apni Zaat Mein Ik Aasmaan Thay Hum Jaisay

Hamarey Paaon Taley Mouj Marta Tha Furaat
Yeh Aur Baat Ke'h Tishna Dehaan Thay Hum Jaisay

Yeh Takht-O-Taaj Rahey Apni Thokaron Mein Sada
Ke'h Sarfaraz-E- Saleeb-O-Sanaa'n Thay Hum Jaisay


Hamarey Dil Mein Utarti Thi Aafatein Mohsin

Azal Se Shehar Mein Khali Makaan Thay Hum Jaisay...

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.