Wednesday, 5 March 2014

Pin It

Widgets

Kuch Shehar Ki Galyaan Bhi Pur-Asraar Bohat Hein

Pur Asraar Bohat

کچھ لوگ بھی وہموں میں گرِفتار بہت ہیں
کچھ شہر کی گلیاں  بھی پُراسرار بہت ہیں

ہے کون، اُترتا ہے وہاں جِسکے لیے چاند
کہنے کو تو چہرے پسِ دیوار بہت ہیں

ہونٹوں پہ سُلگتے ہوئے اِنکار پہ مَت جا
پلکوں سے پَرے بِھیگتے  اقرار بہت ہیں

یہ دُھوپ کی سازش ہے کہ موسم کی شرارت
سائے ہیں وہاں کم ، جہاں اشجار بہت ہیں

بے حرفِ طَلب اِنکو عطا کر کبھی خُود سے
وہ یُوں کہ سوالی تِرے خُوددار بہت ہیں

تُم مُنصِف و عادل ہی سہی شہر میں، لیکن
کیوں خُون کے چِھینٹے سرِ دستار بہت ہیں

اے ہجر کی بستی تُو سلامت رہے، لیکن
سُنسان تیرے کوچہ و بازار بہت ہیں

محسنؔ ہمیں ضِد ہے کہ ہو اندازِ بیاں اور
.....ہم لوگ بھی غالب کے طرفدار بہت ہیں

Kuch Log Bhi Wehmon Mein Giraftaar Bohat Hein
Kuch Shehar Ki Galyaan Bhi Pur-Asraar Bohat Hein

Hai Kon , Utarta Hai Wahan Jis K Liye Chaand
Kehne Ko Tou Chehrey Pas-E-Diwaar Bohat Hein

Honton Pe Sulagtey Huey Inkaar Pe Mat Jaa
Palko’n Se Parey Bheegtey Iqraar Bohat Hein

Yeh Dhoop Ki Sazish Hai Ke’h Mosam Ki Shararat
Saey Hai Wahan Kam,  Jahan Ashjaar Bohat Hein

Be Harf Talab Un Ko Ataa Kar Kabhi Khud Se
Woh Yun K Sawali Teray Khuddaar Bohat Hein

Tum Munsif-O-Adil He Sahi Shehar Mein Lekin
Kiun Khoon Chhee’ntey  Sar-E-Dastaar Bohat Hein

Ay Hijar Ki Basti  Tu Salamat Rahey Lekin
Sunsaan Terey Koocha-O-Bazaar Bohat Hein

Mohsin Hamein Zid Hai Keh Ho Andaz-E-Bayaan Aur
Hum Log Bhi Galib K Tarafdaar Bohat Hein…….


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.