Thursday, 13 March 2014

Pin It

Widgets

Yeh Jab Utha Zameer Ki Awaaz Se Utha

Parwaaz Se Utha

مٹّی تھا میں خمیر ترے ناز سے اٹھا
پھر ہفت آسماں مری پرواز سے اٹھا

انسان ہو، کسی بھی صدی کا، کہیں کا ہو
یہ جب اٹھا ضمیر کی آواز سے اٹھا

صبحِ چمن میں ایک یہی آفتاب تھا
اس آدمی کی لاش کو اعزاز سے اٹھا

سو کرتَبوں سے لکّھا گیا ایک ایک لفظ
لیکن یہ جب اٹھا کسی اعجاز سے اٹھا

اے شہسوارِ حُسن! یہ دل ہے یہ میرا دل
یہ تیری سر زمیں ہے، قدم ناز سے اٹھا

میں پوچھ لوں کہ کیا ہے مرا جبر و اختیار
یا رب  یہ مسئلہ کبھی آغاز سے اٹھا

وہ ابر شبنمی تھا کہ نہلا گیا وجود
میں خواب دیکھتا ہوا الفاظ سے اٹھا

شاعر کی آنکھ کا وہ ستارہ ہوا علیم
 ..... قامت میں جو قیامتی انداز سے اٹھا 

Mitti Tha Mein Khameer Teray Naaz Se Utha
Phir Haft Aasmaa'n Meri Parwaaz Se Utha

Insaan Ho, Kisi Bhi Sadi Ka, Kaheen Ka Ho
Yeh Jab Utha Zameer Ki Aawaaz Se Utha

Subah-E-Chaman Mein Aik Yehi Aaftaab Tha
Iss Aadmi Ki Laash Ko Aizaaz Se Utha

So Kartabo'n Se Likha Gaya Aik Aik Lafz
Lekin Yeh Jab Utha Kisi Ejaaz Se Utha

Ay Sheh-Sawaar-E-Husn Yeh Dil Hai Yeh Mera Dil
Yeh Teri Sar-Zameen Hai , Qadam Naaz Se Utha

Mein Pooch Loon K Kia Hai Mera Jabr-O-Ikhtiyar
Ya Rab Yeh Mas'ala Kabhi Aaghaaz Se Utha

Woh Abr Shabnami Tha K Nehla Gaya Wujood
Mein Khuwaab Dekhta Huwa Alfaaz Se Utha

Shaa'ir Ki Aankh Ka Woh Sitara Huwa Aleem
Qaamat Mein Jo Qayamti Andaaz Se Utha.....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.