Saturday, 24 May 2014

Pin It

Widgets

Bahaar Kia Ab Khizaan Bhi Mujhko Galey Lagaey Tou Kuch Na Paey

Sad Poetry

بہار کیا، اب خزاں بھی مجھ کو
 گلے لگائے تو کچھ نہ پائے

میں برگِ صحرا ہوں ، یوں بھی مجھ کو
 ہَوا اُڑائے تو کچھ نہ پائے

میں پستیوں میں پڑا ہوا ہوں
 زمیں کے ملبوس میں جڑا ہوں

مثالِ نقشِ قدم پڑا ہوں
 کوئی مٹائے، توکچھ نہ پائے

تمام رسمیں ہی توڑ دی ہیں
 کہ میں نے آنکھیں ہی پھوڑ دی ہیں

زمانہ اب مجھ کو آئینہ بھی
 مرا دکھائے تو کچھ نہ پائے

عجیب خواہش ہے میرے دل میں
 کبھی تو میری صدا کو سن کر

نظر جھکائے تو خوف کھائے
 نظر اُٹھائے تو کچھ نہ پائے

میں اپنی بے مائیگی چھپا کر
 کواڑ اپنے کھلے رکھوں گا

کہ میرے گھر میں اداس موسم کی
 شام آئے تو کچھ نہ پائے

تو آشنا ہے نہ اجنبی ہے
 ترا مرا پیار سرسری ہے

مگر یہ کیا رسمِ دوستی ہے
 تو روٹھ جائے تو کچھ نہ پائے

اُسے گنوا کر پھر اس کو پانے کا
 شوق دل میں تو یوں ہے محسن

 کہ جیسے پانی پہ دائرہ سا
 . . . کوئی بنائے تو کچھ نہ پائے


Bahaar Kia Ab Khizaa'n Bhi Mujhko
Galey Lagaye Tou Kuch Na Paaye

Main Barg-E-Sehra Hoon Youn Bhi Mujh Ko
Hawaa Urraaye To Kuch Na Paaye

Main Pastiyo'n Mein Parra Hua Hoon
Zameen K Malboos Mein Jurra Hoon

Misaal-E-Naqash-E-Qadam Parra Hoon
Koi Mitaaye To Kuch Na Paaye

Tamaam Rasmain He Torr De Hein
K Mein Ne Aankhein He Phorr Di Hein

Zamaana Ab Mujh Ko  Aaeina Bhi
Mera Dikhaaye Tou Kuch Na Paaye

Ajeeb Khuwahish Hai Mere Dil Mein
Kabhi Tou Meri Sada Ko Sun Kar

Nazar Jhukaaye Tou Khof Khaaye
Nazar Uthaaye Tou Kuch Na Paaye

Main Apni Be-Mayegi Chupa Kar
Kuwaarr Apne Khuley Rakhoo'n Ga

K Mere Ghar Mein Udaas Mosam Ki
Shaam Aaye Tou Kuch Na Paaye

Tu Aashna Hai Na Ajnabi Hai
Tera Mera Piyar  Sarsari Hai

Magar Yeh Kiya Rasm-E-Dosti Hai
Tu Rooth Jaaye Tou Kuch Na Paaye

Usay Ganwa Kar Usay Phir Paaney Ka
Shoq Dil Mein Tou Youn Hai Mohsin

K Jaise Paani Pe Daayira Sa
Koi Banaaye Tou Kuch Na Paaye. . .

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 


Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.