Monday, 12 May 2014

Pin It

Widgets

Dil Ka Aalam Hai Tere Baad Khalaaon Jaisa


اب وہ طوفان ہے نہ وہ شور ہواؤں جیسا
دل کا عالم ہے تیرے بعد خلاؤں جیسا

کاش دنیا میرے احساس کو واپس کر دے
خاموشی کا وہی انداز صداؤں جیسا

پاس رہ کر بھی ہمیشہ وہ بہت دور ملا
اس کا اندازِ تغافل تھا خداؤں جیسا

کتنی شدت سے بہاروں کو تھا احساسِ معال
پھول کھل کر بھی لگا زرد خزاؤں جیسا

کیا قیامت ہے کہ دنیا اسے سردار کہے
جس کا اندازِ سخن بھی ہو گداؤں جیسا

پھر تیری یاد کے موسم نے جگائے محشر
پھر میرے دل میں اٹھا  شور  ہواؤں جیسا

بارہا خواب میں پا کر مجھے پیاسا محسن

اس کی زلفوں نے کیا رقص گھٹاؤں جیسا...


Ab Woh Toofaan Hai Na Woh Shor Hawaon Jaisa
Dil Ka Aalam Hai Tere Baad Khalaaon Jaisa

Kash Dunya Mre Ehsaas Ko Wapas Kardey
Khamoshi Ka Wohi Andaaz Sadaaon Jaisa

Paas Reh Kar Bhi Hamesha Woh Bohat Door Mila
Us Ka  Andaz-E-Tagaful  Tha Khudaaon Jaisa

Kitni Shiddat Se Tha Baharon Ko Tha Ehsas-E-Mua'al
Phool  Khil  Kar  Bhi Laga Zard Khizaaon Jaisa

Kia Qayamat Hai Ke'h Dunya Usay Sardaar Kahey
Jis Ka Andaz-E-Sukhan Bhi Ho Gadaaon Jaisa

Phir Teri Yaad K Mosam Ne Jagaey Mehshar
Phir Merey Dil Mein Utha Shour Hawaaon Jaisa

Baarha Khuwab Mein Paa Kar Mujhe Piyasa Mohsin
Us Ki Zulfon Ne Kia Raqs Ghataoaon Jaisa...........

  Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.