Tuesday, 20 May 2014

Pin It

Widgets

Ik Dosrey Ko Jaan Na Paey Tamaam Umar

Sad Poetry

دشمن کو ہارنے سے بچانا عجیب تھا
ترکِ مدافعت  کا بہانا عجیب تھا

اک دوسرے کو جان نہ پائے تمام عمر
ہم ہی عجیب تھے کہ زمانہ عجیب تھا

زندہ بچا نہ قتل ہُوا طائرِ اُمید
اُس تیرِ نیم کش کا نشانہ عجیب تھا

سُنتے رہے اخیر تلک مہر و ماہ و نجم
اس خاکداں کا سارا فسانہ عجیب تھا

جس راہ سے کبھی نہیں ممکن تیرا گزر
تیرے طلب گروں کا ٹھکانہ عجیب تھا

اب کے تو یہ ہُوا ہے کہ میرے بُلانے سے
اس زود رنج شخص کا آنا عجیب تھا

کھونا تو خیر تھا ہی کسی دن اُسے مگر
ایسے ہَوا مزاج کا پانا عجیب تھا

سب داغ بارشوں کی ہَوا میں بُجھے رہے
بس دل کا ایک زخم پرانا عجیب تھا ... 

Dushman Ko Haarney Se Bachana Ajeeb Tha
Tark-e-Mudafe'at  Ka  Bahana Ajeeb Tha

Ik Dosrey Ko Jaan Na Paey Tamaam Umar
Hum He Ajeeb Thay K  Zamana Ajeeb Tha

Zinda Bacha Na Qatal Hua Taair-e-Umeed
Us Teer-e-Neem Kash Ka  Nishana Ajeeb Tha

Suntey Rahey Akheer Talak Mehr-o-Maah-o-Najm
Us Khaak-Daan Ka Sara  Fasana Ajeeb Tha

Jis Raah Se Kabhi Nahi Mumkin Tera Guzar
Terey Talab-Garon Ka  Thikana Ajeeb Tha

Ab K Tou Yeh Hua Hai Ke'h Merey Bulaney Se
Us Zoud Ranj Shakhs Ka  Aana Ajeeb Tha

Khona Tou Khair Tha He Kisi Din Usay Magar
Aisay Hawa Mijaaz Ka  Pana Ajeeb Tha

Sab Daag Barishon Ki Hawa Mein Bujhey Rahey
 ..... .Bus Dil Ka Aik Zakhm  Purana Ajeeb Tha


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.