Thursday, 22 May 2014

Pin It

Widgets

محبت کی گذر گاہیں کشادہ کیوں نہیں ہوتی

Sad Poetry Collection

ملاقاتیں ہماری بے ارادہ کیوں نہیں ہوتی
محبت کی گذر گاہیں کشادہ  کیوں نہیں ہوتی

ہمارے درمیاں یہ اجنبیت کا دھواں کیوں ہے
ہماری چاہتیں حد سے زیادہ کیوں نہیں ہوتی

میرے جذبات کی خوشبو اترتی کیوں نہیں تجھ میں
ترے دل کی سبھی راہیں کشادہ کیوں نہیں ہوتی

خوشی کی چند بوندیں جسم کو گیلا تو کر دیتی ہیں
میسر راتیں ہیں لیکن یہ  زیادہ کیوں نہیں ہوتی

تیرے نزدیک رہ کر بھی یہ دوری کا گماں کیسا
  تیری بانہیں مری خاطر کشادہ کیوں نہیں ہوتی

بڑے نازو ادا اکثر یہ دکھلاتی ہے رستوں میں
.یہ حسیں لڑکیاں بھی آخر سادہ  کیوں نہیں ہوتی 

Mulaqatein Hamaari Be-Irada’h Kiun Nahi Hoti
Mohabbat Ki Guzar Gaahein Kushadah Kiun Nahi Hoti

Hamaare Darmiyan Ye Ajnabiyat Ka Dhuwaan Kiun Hai
Hamaari Chahten Had Se Ziyada’h  Kiun Nahi Hoti

Merey Jazbaat Ki Khushbu Utarti Kiun Nahi Tujh Mein
Tere Dil Ki Sabhi Raahein Kushada’h  Kiun Nahi Hoti

Khushi Ki Chand Boondein Jisam Ko Geela Kar To Deti Hain
Muyassar Rahtein Hein  Lekin Ziyada’h  Kiun Nahi Hoti

Terey Nazdeek Reh Kar Bhi Ye Doori Ka Gumaan Kesa
Teri Baahein Meri Khaatir Kushada’h  Kiun Nahi Hoti

Barre Naz-O-Ada Aksar Ye Dikhlati Hein Raaston Mein
Ye Haseen Larkiyan Bhi Aakhir Saada’h  Kiun Nahi Hoti .

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.