Monday, 26 May 2014

Pin It

Widgets

Shokh Rukh Pe Haya Jhilmilaney Lagi

Romantic Poetry

شوخ رخ پہ حیا جھلملانے لگی
زِندگی گیت خوشیوں کے گانے لگی

عرش والوں نے چھوڑی کوئی پھلجھڑی
یا وُہ غنچہ دَہَن مسکرانے لگی

کورے کاغذ پہ لکھا جو نام آپ کا
کاغذی پھول سے خوشبو آنے لگی
       
میں تو ہم شہر ہونے پہ بے چین تھا
کل سے وُہ گھر میں بھی آنے جانے لگی

زُلف کا پھول اُس نے مجھے دے دِیا
عمر بھر کی اُداسی ٹھکانے لگی

ایک دُنیا کو گڑیا پہ رَشک آ گیا
لیلیٰ خود سج کے گڑیا سجانے لگی

چور زُلفوں کے تنکے سے پکڑا گیا
دِل چرا کر وُہ نظریں چرانے لگی

پھول توڑے بنا اُس پہ لب رَکھ دِئیے
چاہنے کا قرینہ سکھانے لگی

قیس کل شب ملایا انہیں چاند سے
چاندنی اُن سے شہ مات کھانے لگی ..


Shokh Rukh Pe Haya Jhilmilaney Lagi
Zindagi Geet Khushyon K Gaaney Lagi

Arsh Waalon Ne Chorri Koi Phuljharri
Yaa Woh Guncha Dehan Muskurane Lagi

Koray Kaagaz Pe Likha Jo Naam Apka
Kaagzi Phool Se Khushbu Aaney Lagi

Mein Tou Hum-Shehar Honey Pe Bechain Tha
Kal Se Woh Ghar Mein Bhi Aaney Janey Lagi

Zulf Ka Phool Us Ne Mujhe De Diya
Umar Bhar Ki Udaasi Thikaney Lagi

Aik Dunya Ko Gurrya Pe Rashk Aagaya
Laila Saj Dhaj K Gurrya Sajaney Lagi

Chor Zulfon Ka Tinkey Se Pakrra Gaya
Dil Chura Kar Woh Nazrein Churaney Lagi

Phool Torrey Bina Us Pe Lab Rakh Diye
Chahaney Ka Tareeqa Sikhaney Lagi

Qais Kal Shab Milaya Uneh Chaand Se
 .. Chaandni Un Se Shay Maat Khaney Lagi

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.