Wednesday, 4 June 2014

Pin It

Widgets

Ab Usay Dekhey Huey Kitney Zamaney Ho Gaey

Yaad Poetry Collection

کون آیا، راستے آئینہ خانے ہو گئے
رات روشن ہو گئی دن بھی سہانے ہو گئے

کیوں حویلی کے اجڑنے کا مجھے افسوس ہو
سینکڑوں بے گھر پرندوں کے ٹھکانے ہو گئے

جاؤ ان کمروں کے آئینے اٹھا کر پھینک دو
بے ادب کہہ رہے ہیں ہم پرانے ہو گئے

یہ بھی ممکن ہے میں نے اسکو پہچانا نہ ہو
اب اسے دیکھے ہوئے کتنے زمانے ہو گئے

میری پلکوں پہ یہ آنسو، پیار کی توہین تھے
 ...اسکی آنکھوں سے گرے، موتی کے دانے ہو گئے

Kon Aaya,  Raastey Aaiena Khaney Ho Gaey
Raat Roshan Ho Gai Din Bhi Suhaney Ho Gaey

Kiun Haweli K Ujarrney Ka Mujhe Afsos Ho
Sainkrron Be-Ghar Parindon K Thikaney Ho Gaey

Jao Un Kamron K Aaieney Utha Kar Phaink Do
Be-Adab  Keh Rahe Hein Hum Puraney Ho Gaey

Yeh Bhi Mumkin Hai Mein Usko Pehchana Na Ho
Ab Usay Dekhey Huey Kitney Zamaney Ho Gaey

Meri Palkon Pe Yeh Aansoo,  Piyar Ki Toheen Thay
Uski Aankhon Se Giray, Moti K Daaney Ho Gaey .....


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.