Thursday, 19 June 2014

Pin It

Widgets

Ay Dost Teri Aankh Jo Num Hai Tou Mujhe Kia

Ansoo Poetry Collection



اے دوست  تری آنکھ جو نم ہے تو مجھے کیا
میں خوب ہنسوں گا، تجھے غم ہے تو مجھے کیا

کیا میں نے کہا تھا کہ زمانے سے بھلاکر
اب تو بھی سزاوارِ ستم ہے تو مجھے کیا

ہاں لے لے قسم گر مجھے قطرہ بھی ملا ہو
تو شاکی اربابِ کرم ہے تو مجھے کیا

جس در سے ندامت کے سوا کچھ نہیں ملتا
اُس در پہ ترا سر بھی جو خم ہے تو مجھے کیا

میں نے تو پکارا ہے محبت کے اُفق سے
رستے میں ترے سنگِ حرم ہے تو مجھے کیا

بھولا تو نہ ہوگا تجھے سقراط کا انجام
ہاتھوں میں ترے ساغرِ سم ہےتو مجھے کیا

پتھر نہ پڑیں گر سرِبازار تو کہنا
تو معترف حسنِ صنم ہے تو مجھے کیا

میں سرمد و منصور بنا ہوں تری خاطر
یہ بھی تری اُمید سے کم ہے تو مجھے کیا ...



Ay Dost Teri Aankh Jo Num Hai Tou Mujhe Kia
Mein Khoob Hansoo'n Ga Tujhe Ghamhai Tou Mujhe Kia

Kia Mein Ne Kaha Tha K Zamaney Se Bhala Kar
Ab Tu Bhi Saza War-E-Sitam Hai Tou Mujhe Kia

Han Lay Lay Qasam Gar Mujhe Qatra Bhi Mila Ho
Tu Saaki Arbab-E-Karam Hai Tou Mujhe Kia

Jis Dar Se Nidamat K Siwa Kuch Nahi Milta
Us Dar Pe Tera Sar Bhi Kham Hai Tou Mujhe Kia

Mein Ne Tou Pukara Hai Mohabbat K Ufaq Se
Rastey Mein Tere Sang-E-Haram Hai Tou Mujhe Kia

Bhoola Tou Na Hoga Tujhe Saqraat Ka Anjaam
Hathon Mein Terey Sagar-E-Sum Hai Tou Mujhe Kia

Pathar Na Parein Gar Sar-E-Bazaar Tou Kehna
Tu Moutaraf Husn-E-Sanam Hai Tou Mujhe Kia

Mein Sarmad-O-Mansoor Bana Hoon Teri Khaatir
Yeh Bhi Teri Ummeed Se Kam Hai Tou Mujhe Kia ...


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.