Saturday, 28 June 2014

Pin It

Widgets

Hum Ko Maloom Hai Anjaam Hamara Murshid

Murshid Urdu Poetry

ھم کو معلوم ھے انجام ھمارا مرشد
اس سمندر کا نہیں کوئی کنارا مرشد

ھم ہی اے عشق ترے پاؤں پڑے تھے آ کر
دوش اب اس میں نہیں کوئی تمہارا مرشد

اب تو جو کچھ ھے شبِ ہجر ترے ہاتھ میں ھے
خاک کر دے ! یا بنا دے مجھے تارا مرشد

میں اگر دشت نہیں دشت نما بن جاؤں
اس سے کم پر نہیں ہونا ھے گزارا مرشد

دشت کی خاک اڑانے پہ ہوا ہوں معمور
کوئی تنبیہ مجھے  کوئی اشارہ مرشد

حضرتِ میر میرے خواب میں آئے ہوئے تھے
آنکھ کھلتے ھی انہیں میں نے پکارا – مرشد

اک ترا ہجر ہو اور صاحبِ اولاد بھی ہو
کچھ تو ہو جائے بڑھاپے کا سہارا مرشد

یہی کافی ھے ترا ہجر نظر آتا ھے
اس کی تدفین نہیں ھم کو گوارا مرشد

آج سمجھا ہوں محبت کی کہانی اشفاق
 ... آج سمجھا کسے کہتا تھا خسارہ مرشد


Hum Ko Maloom Hai Anjaam Hamara Murshid
Iss Samandar Ka Nahi Koi Kinara'h Murshid

Hum He Ay Ishq Tere Paaon Parrey Thay Aakar
Dosh Ab Iss Mein Nahi Koi Tumhara Murshid

Ab Tou Jo Kuch Hai Shab-E-Hijr Tere Hath Mein Hai
Khaak Kar Day ! Ya Bana Day Mujhe Tara Murshid

Mein Agar Dasht Nahi Dasht Numa Ban Jaon
Iss Se Kam Par Nahi Hona Hai Guzara'h Murshid

Dasht Ki Khaak Urraney Pay Hua Youn Mamoor
Koi Tabeeh Mujhe , Koi Ishara'h Murshid

Hazrat-E-Meer Mere Khuwab Mein Aaey Huey Thay
Aankh Khulte He Uneh Mein Ne Pukara'h Murshid

Ik Tera Hijr Ho Aur Sahib-E-Olaad Bhi Ho
Kuch Tou Ho Jaey Burrhapay Ka Sahara Murshid

Yehi Kaafi Hai Tera Hijr Nazar Aata Hai
Is Ki Tadfeen Nahi Hum Ko Gawara'h Murshid

Aaj Samjha Hoon Mohabbat Ki Kahani Ashfaq
Aaj Samjha Kisay Kehta Tha Khasara'h Murshid ...

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.