Friday, 27 June 2014

Pin It

Widgets

Us Ne Bhi Hum Se Kaam Bohat Mukhtasir Liya

Bewafa Urdu Poetry

لینا نہیں تھا نام کسی کا، مگر لیا
دل نے یہ کام کتنی سہولت سے کر لیا

پتے گرے تو جسم چھپانے کے واسطے
پیڑوں نے اپنا آپ پرندوں سے بھر لیا

یکدم صداۓ گریہ و ماتم ہوئ بلند
چڑیوں نے جب درخت سے اذن_سفر لیا

میں نے کہا کہ رات کی رانی سے کر گریز
خوشبو نے میری بات کا الٹا اثر لیا

نظریں چرا کے بھاگ تو آتا وہاں سے میں
اشکوں نے میری آنکھ کو موقعے پہ دھر لیا

گر ھم نے زندگی سے رکھا ناروا سلوک
 ....اس نے بھی ہم سے کام بہت مختصر لیا

Lena Nahi Tha Naam Kisi Ka Magar Liya
Dil Ne Yeh Kaam Kitni Sahoolat Se Kar Liya

Pattay Giray Tou Jism Chhupaney K Waastey
Pairron Ne Apna Aap Parindon Se Bhar Liya

Yukdum Sada-E-Girya-O-Matam Hui Buland
Chirryon Ne Jab Darkht Se Izn-E-Safar Liya

Mein Ne Kaha K Raat Ki Rani Se Kar Guraiz
Khushboo Ne Meri Baat Ka Ulta Asar Liya

Nazrein Chura K Bhaag Tou Aata Wahan Se Mein
Ashkon Ne Meri Aankh Ko Moqay Pay Dhar Liya

Gar Hum Ne Zindagi Se Rakha Naarwa Sulook
Iss Ne Bhi Hum Se Kaam Bohat Mukhtasir Liya....


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.