Wednesday, 16 July 2014

Pin It

Widgets

Chhoti Si Ik Khata Ki Talaafi Na Kar Sakay

Sad Poetry Collection

چھوٹی سی اک خطا کی تلافی نہ کر سکے
     ‎ ‎ محفل میں کوی بات اضافی نہ نہ کر سکے

وعدہ یہی تھا ہم اسے چاہیں گے عمر بھر
وعدہ کیا تو وعدہ خلافی نہ کر سکے

تو نے جہاں کہا وہاں ٹھرا ہوا ہے عشق
کچھ بھی تیری رضا کے منافی نہ کر سکے

ان کے ملنے پر آج نظر جھک کے رہ گئی
دھڑکا وہ جی کے بات بھی کافی نہ کر سکے

روئے زمیں پہ تم سے مسیحا ملے تو تھے
....لیکن کسی دوا کو بھی شافی نہ کر سکے


Chhoti Si Ik Khata Ki Talaafi Na Kar Sakay
Mehfil Mein  Koi  Baat  Izaafi Na Kar Sakay

Waada Yehi Tha Hum Usay Chahein Gay Umar Bhar
Waada Kiya Tou Waada Khilaafi Na Kar Sakay

Tu Ne Jahaan Kaha Waheen Thehra Huwa Hai Ishq
Kuch Bhi Teri Raza K Munaafi Na Kar Sakay

Un K Milney Par Aaj Nazar Jhuk K Reh Gayi
Dharka Wo Jee K Baat Bhi Kaafi Na Kar Sakay

Rooy-e-Zameen Pe Tum Se Maseeha Miley Tou Thay
Lekin Kisi Dawaa Ko Bhi Shaafi Na Kar Sakay..........

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.