Saturday, 12 July 2014

Pin It

Widgets

Jungle Ki Tarha Shehar Mein Tanhaaie Ka Dar Hai

Tanhai Urdu Poetry

Soda Hai Koi Sar Mein Na Sodaaie Ka Dar Hai
Iss Baar Mujhe Khud Se Shanasaaie Ka Dar Hai

Lay Aaya Mera Ishq Mujhe Aisi Gali Mein
Aawaaz Lagat Hoon Tou Ruswaaie Ka Dar Hai

Dushman Se Larraie Koi Aasaan Nahi Hai
Woh Sath Na Aaey Jisay Paspaaie Ka Dar Hai

Rangon K Tilissimaat Ne Youn Ghair Liya Hai
Manzar Se Nikalta Hoon Tou Binaaie Ka Dar Hai

Mein Ghar Mein Sahoolat Se Parra Theek Hon Gohar
Jungle Ki Tarha Shehar Mein Tanhaaie Ka Dar Hai.....

سودا ہے کوئی سر میں نہ سودائی کا ڈر ہے
اس بار مجھے خُود سے شناسائی کا ڈر ہے

لے آیا مرا عشق مجھے ایسی گلی میں
آوازہ لگاتا ہوں تو رُسوائی کا ڈر ہے

دُشمن سے لڑائی کوئی آسان نہیں ہے
وہ ساتھ نہ آئے جسے پسپائی کا ڈر ہے

رنگوں کے طلسمات نے یوں گھیر لیا ہے
منظر سے نکلتا ہوں تو بینائی کا ڈر ہے

میں گھر میں سہولت سے پڑا ٹھیک ہوں گوہر
.......جنگل کی طرح شہر میں تنہائی کا ڈر ہے

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.