Thursday, 10 July 2014

Pin It

Widgets

Saanson Mein Bagawat Ka Sukhan Bol Raha Hai

Best Emotional Poetry

سانسوں میں بغاوَت کا سُخن بول رہا ہے
تقدیر کے فرزَند کا دِل ڈول رہا ہے

افلاک کی وُسعت پہ تلاطُم ہی تلاطُم
شاہین ابھی پرواز کو پر تول رہا ہے

چیتے کی گرج دار صدا ، قومی ترانہ
شیروں کا شروع سے یہی ماحول رہا ہے

پرواز کی قیمت پہ ملے رِزق تو لعنت
غیور پرندوں کا یہی قول رہا ہے

دِہقان کے اِفلاس پہ دِل خون میں تر ہے
مزدُور کی حالت پہ لَہُو کھول رہا ہے

یہ چاند ہے کشکول نہیں حاکمِ کِشور
پرچم کو ذِرا دیکھ یہ کچھ بول رہا ہے

سو نسلوں کے بچوں کو جنم دیتی ہے وُہ قوم
جس قوم کا منشور بھی کشکول رہا ہے۔

اِنسان ہی ہر چیز سے سستا ہے جہاں میں
اِنسان ہی ہر دور میں اَنمول رہا ہے

چپ چاپ ہے قیس آج بھی تاریخِ ندامت
اِنکارِ جُنوں کانوں میں رَس گھول رہا ہے


Saanson Mein Bagawat Ka Sukhan Bol Raha Hai
Taqdeer K Farzand Ka Dil  Dol Raha Hai

Aflaak Ki Wus'at Pe Talatum He Talatum
Shaheen Abhi Parwaaz Ko Par Tol Raha Hai

Cheetay Ki Garjdaar Sada , Qoumi Tarana
Shairon Ka Shuru Se Yehi Maahol Raha Hai

Parwaaz Ki Qeemat Pe Milay Rizq Tou Lanat
Gayyoor Parindon Ka Yehi Qoul Raha Hai

Dehqaan K Iflaas Pe Dil Khoon Mein Tar Hai
Mazdoor Ki Halat Peh Lahoo Khol Raha Hai

Yeh Chaand Hai Kashkol Nahi Hakim-E-Kishwar
Parcham Ko Zara Daikh Yeh Kuch Bol Raha Hai

So Naslon K Bachon Ko Janam Deti Hai Woh Qoum
Jis Qoum Ka Manshoor Bhi Kashkol Raha Hai

Insaan He Har Har Cheez Se Sasta Hai Jahan Mein
Insaan He Har Dor Mein Anmol Raha Hai

Chup Chaap Hai Qais Aaj Bhi Tareekh-E-Nidamat
Inkar-E-Junoo Kaano'n Mein Rus Ghol Raha Hai...


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.