Thursday, 31 July 2014

Pin It

Widgets

Udaas Dil Ki Viraniyon Mein

Sad Urdu Poetry

اُداس دل کی ویرانیوں میں
 بکھر گئے ہیں خواب سارے

یہ میری بستی سے کون گزرا
 نکھر گئے ہیں گلاب سارے

وہ دور تھا تو حقیقتوں پر
 سراب کا اک گمان سا تھا

وہ پاس ہے تو گمان ہے کے
 حقیقتیں ہیں سراب سارے

ناجانے کتنی شکایتیں تھیں 
ناجانے کتنے گلے تھے ان سے

جو ان کو دیکھا تو بھول بیٹھے
 سوال سارے جواب سارے

جو وہ نا ہوتا تو کس طرح
 میری سوچ کو پھر حروف ملتے

بس ایک ہی ذات نے دیے ہیں
........ کتاب کو میری باب سارے


Udaas Dil Ki Viraniyon Mein
Bikhar Gaey Hein Khuwaab Saray

Yeh Meri  Basti Say Kon Guzra
Nikher Gaye Hen Gulaab Saray

Woh Door Tha Tou Haqiqaton Par
Saraab Ka Ik Gumaan Sa Tha

Woh Paas Hai Tou Gumaan Hai K
Haqiqatein Hein Saraab Saray

Na Jaany Kitni Shikayatein Thee'n
Na Janay Kitnay Gilay Thay Un Say

Jo Unko Dekha Tou Bhool Baithey
Sawal Saray Jawab Saray

Woh Jo Na Hota Tou Kis Tarhah
Meri Soch Ko Phir Huroof Miltey

Bus Aik He Zaat Ne Diye Hein
Kitaab Ko Meri Baab Saray............

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

3 comments:

Thanks For Nice Comments.