Sunday, 31 August 2014

Pin It

Widgets

Aao Dhoondein Kaheen Darwaish Duaaon Walay

Best Dua Poetry

شہر کی دھوپ سے پوچھیں کبھی گاؤں والے
کیا ہوئے لوگ وہ زلفوں کی گھٹاؤں والے

اب کے بستی نظر آتی نہیں اُجڑی گلیاں
آؤ ڈھونڈیں کہیں درویش دعاؤں والے

سنگزاروں میں مرے ساتھ چلے آئے تھے
کتنے سادہ تھے وہ بلّور سے پاؤں والے

ہم نے ذرّوں سے تراشے تری خاطر سورج
اب زمیں پر بھی اتر زرد خلاؤں والے

کیا چراغاں تھا محبت کا کہ بجھتا ہی نہ تھا
کیسے موسم تھے وہ پُر شور ہواؤں والے

تُو کہاں تھا مرے خالق کہ مرے کام آتا
مجھ پہ ہنستے رہے پتھر کے خداؤں والے

ہونٹ سی کر بھی کہاں بات بنی ہے محسن
 ......خامشی کے سبھی تیور ہیں صداؤں والے


Shehar Ki Dhoop Se Poochein Kabhi Gaao’n Walay
Kia Huey Log Woh Zulfon Ki Ghataaon Walay

Ab K Basti Nazar Aati Nahi Ujrri Galyaan
Aao Dhoondein Kaheen Darwaish Duaaon Walay

Sang-Zaaron Mein Merey Sath Chalay Aaey Thay
Kitney Sada'h Thay Woh Bullawar Se Paaon Walay

Hum Ne Zarron Se Tarashay Teri Khatir Sooraj
Ab Zameen Par Bhi Utar Zard Khalaaon Walay

Kia Charaghan Tha Mohabbat Ka Ke'h Bujhta He Na Tha
Kaisay Mosam Thay Woh Pur Shor Hawaaon Walay

Tu Kahan Tha Merey Khaliq Ke'h Merey Kaam Aata
Mujh Pe Hanstey Rahey Pathar K Khudaaon Walay

Hont See Kar Bhi Kahan Baat Bani Hai Mohsin
Khaamshi K Sabhi Taiwar Hein Sadaaon Walay......


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

3 comments:


  1. کیا چراغاں تھا محبت کا کہ بجھتا ہی نہ تھا
    کیسے موسم تھے وہ پُر شور ہواؤں والے

    ReplyDelete

Thanks For Nice Comments.