Saturday, 2 August 2014

Pin It

Widgets

Ab Dil K Ujarrney Janay K Imkaan Hein Ziada

Udas Dil Poetry

جس تاج  کو دیکھو  وہی کشکول  نما ہے
اب کے تو فقیروں سے بھی سلطان ہیں زیادہ

ہر ایک کو دعوی ہے یہاں چاہ  کا اپنی
اب دل کے اجڑ جانے کے امکان ہیں زیادہ

کیا کیا نہ غزل اس کی جدائی میں کہی ہے
ہم پہ شب ہجراں تیرے احسان ہیں زیادہ

لوگوں نے تو جو زخم دیے تھے سو دیے تھے
کچھ تیرے کرم ہم پہ میری جان ہیں زیادہ

عشاق زمانہ سے کہے کون فراز اب
..........ہم یار کی زلفوں سے پریشان ہیں زیادہ‎


Jis Taaj Ko Dekho Wohi Kashkol Numa Hai
Ab K Tou Faqeeron Se Bhi Sultan Hein Ziada

Har Aik Ko Dawa Hai Yahan Chah Ka Apni
Ab Dil K Ujarrney Janay K Imkaan Hein Ziada

Kia Kia Na Ghazal Us Ki Judai Mein Kahi Hai
Hum Pay Shab-E-Hijraan Teray Ehsaan Hein Ziada

Logon Ne Tou Jo Zakhm Diye Thay So Diye Thay
Kuch Teray Karam Hum Pay Meri Jaan Hein Ziada

Ashaq-E-Zamana Se Kahey Kon Faraz Ab
Hum Yaar Ki Zulfon Se Pareshan Hein Ziada.........

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

No comments:

Post a Comment

Thanks For Nice Comments.