Sunday, 17 August 2014

Pin It

Widgets

Dil Se Koi Bhi Ehad Nibhaya Nahi Gaya

Best Wada Poetry

دل سے کوئی بھی عہد نبھایا نہیں گیا
سر سے جمالِ یار کا سایہ نہیں گیا

کب ہے وصالِ یار کی محرومیوں‌کا غم
یہ خواب تھا سو ہم کو دکھایا نہیں گیا

میں جانتا تھا آگ لگے گی ہر ایک سمت
مجھ سے مگر چراغ بجھایا نہیں گیا

وہ شوخ آئینے کے برابر کھڑا رہا
مجھ سے بھی آئینے کو ہٹایا نہیں گیا

ہاں ہاں نہیں ہے کچھ بھی مرے اختیار میں
ہاں ہاں وہ شخص مجھ سے بھلایا نہیں گیا

اڑتا رہا میں دیر تلک پنچھیوں کے ساتھ
 ......اے سعد مجھ سے جال بچھایا نہیں گیا


Dil Se Koi Bhi Ehad Nibhaya Nahi Gaya
Sar Se Jamal-E-Yaar Ka Saya Nahi Gaya

Kab Hai Visal-E-Yaar Ki Mehromiyon Ka Gham
Yeh Khuwaab Tha So Hum Ko Dikhaya Nahi Gaya

Mein Janta Tha Aag Lagay Gi Har Aik Simt
Mujhse Magar Charaag Bujhaya Nahi Gaya

Woh Shokh Aaienay K Barabar Kharra Raha
Mujhse Bhi Aaienay Ko Hataya Nahi Gaya

Han Han Nahi Hai Kuch Bhi Mereay Ikhtiyaar Mein
Han Han Woh Shakhs Mujhse Bhulaya Nahi Gaya

Urrta Raha Mein Dair Talak Panchiyon K Sath
Ay Saad Mujh Se Jaal Bichaya Nahi Gaya........

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

5 comments:

Thanks For Nice Comments.