Thursday, 4 September 2014

Pin It

Widgets

Kuch Log Jo Sawaar Hein Kaghaz Ki Naao Par

Sahib Poetry Collection

کچھ لوگ جو سوار ہیں کاغذ کی ناؤ پر
تہمت تراشتے ہیں ہؤا کے دباؤ پر

موسم ہے سرد مہر ، لہو ہے جماؤ پر
چوپال چپ ہے ، بھیڑ لگی ہے الاؤ پر

سب چاندنی سے خوش ہیں ، کسی کو خبر نہیں
پھاہا ہے مہتاب کا گردوں کے گھاؤ پر

اب وہ کسی بساط کی فہرست میں نہیں
جن منچلوں نے جان لگا دی تھی داؤ پر

سورج کے سامنے ھیں نئے دن کے مرحلے
اب رات جا چکی ہے گزشتہ پڑاؤ پر

گلدان پر ہے نرم سویرے کی زرد دھوپ
حلقہ بنا ہے کانپتی کرنوں کا گھاؤ پر

یوں خود فریبیوں میں سفر ہو رہا ہے طے
........بیٹھے ہیں پل پہ اور نظر ہے بہاؤ پر


Kuch Log Jo Sawaar Hein Kaghaz Ki Naao Par
Tohmat Tarashtey Hein Hawa K Dabaao Par

Mosam Har Sard Mohar , Lahoo Hai Jamaao Par
Chopaal Chup Hai , Bheerr Lagi Hai Alaao Par

Sab Chaandni Se Khush Hein , Kisi Ko Khabar Nahi
Phaha Hai Mehtaab Ka , Gurdon K Ghaao Par

Ab Woh Kisi Bisaat Ki Fehrast Mein Nahi
Jin Manchalon Ne Jaan Laga Di Thi Daao Par

Sooraj K Samney Hein Naey Din K Marhaley
Ab Raat Ja Chuki Hai Guzishta Parraao Par

Guldaan Par Hai Naram Saweray Ki Zard Dhoop
Halqa Bana Hai Kaanpti Kirno K Ghaao Par

Youn Khud Farebiyon Mein Safar Ho Raha Hai Tay
Baithay Hein Pull Par Aur Nazar Hai Bahaao Par.....


 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

8 comments:

Thanks For Nice Comments.