Thursday, 18 September 2014

Pin It

Widgets

Mein Lay Gaya Tha Kashti Jahan Se Nikaal Kar

Dard Bhari Ghazal

میں لے گیا تھا کشتی جہاں سے نکال کر
لے جائیں پھر ھوائیں وھیں ٹھیل ٹھال کر

پھر باٹ اور ترازو اٹھا لائے ھیں عزیز
پہلے انہیں دکھا دوں وفا تول تال کر

مجھ کو ستا رھے ھیں شبِ غم کےشین غین
استاد کہہ رھے ھیں الف کو وصال کر

اک چڑیا رہ گئی ھے انا کے درخت پر
افلاس کہہ رہا ھے اسے بھی حلال کر

پھر میں نے پھول بوئے کنارے کی ریت میں
....مایوس ہو گیا تھا سمندر کھنگال کر
Mein Lay Gaya Tha Kashti Jahan Se Nikaal Kar
Lay Jaen Phir Hawaei'n Mujhe Thail Thaakl Kar

Phir Baat Aur Tarazoo Utha Laey Hein Azeez
Pehlay Uneh Dikha Doon Wafa Tol Taal Kar

Mujhko Sata Rahey Hein Shab-E-Gham K Sheen Gain
Ustaad Keh Rahey Hein Alif Ko Visaal Kar

Ik Chirrya Reh Gai Hai Anaa Ka Darakht Par
Aflaas Keh Raha Hai Issay Bhi Halaal Kar

Phir Mein Ne Phool Boey Kinaray Ki Rait Mein
Mayoos Hogaya Tha Samandar Khangaal Kar......

  Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

4 comments:

Thanks For Nice Comments.