Wednesday, 24 September 2014

Pin It

Widgets

Mein So Gaya Tha Raat Kahani K Beech Mein

Pani K Beech

کشتی الٹ گئی میری پانی کے بیچ میں
میں سو گیا تھا رات کہانی کے بیچ میں

میرے تمہارے خواب پڑے ہیں یہیں کہیں
خواجہ سراؤ راجاؤ رانی  کے بیچ میں

جس بات سے گریز تھا شرط وصال شب
میں کہ گیا وہ بات روانی کے بیچ میں

بس اس لئے سنبھال کے رکھے ہیں تیرے خط
اک خواب  جاگتا ہے نشانی  کے بیچ میں

وہ اظطراب عشق تھا ہم دان کر گئے
....دل سی حسین چیز جوانی کے بیچ میں
Kashti Ulat Gayi Meri Paani Ke Beech Mein
Main So Gaya Tha Raat Kahaani Ke Beech Mein

Mere Tumhaaray Khuwaab Parre Hain Yaheen Kaheen
Khuwaaja-Sara-0-Raja-0-Raani K Beech Mein

Jis Baat Se Guraiz Tha Shart-E-Wisaal-E-Shab
Main Keh Gaya W0 Baat Rawaani K Beech Mein

Bus Is Liye Sambhaal K Rakhe Hain Tere Khatt
Ek Khuwaab Jaagta Hai Nishaani K Beech Mein

Woh Iztaraab-E-Ishq Tha Hum Daan Kar Chuke
Dil Si Hasseen Cheez Jawaani K Beech Mein..


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

5 comments:

Thanks For Nice Comments.