Saturday, 6 September 2014

Pin It

Widgets

Mera Saya Teri Diwaar Se Ja Milta Hai


کہیں جنگل کہیں دربار سے جا ملتا ہے
سلسلہ وقت کا تلوار سے جا ملتا ہے

مِیں جہاں بھی ہوں مگر شہر میں دِن ڈھلتے ہی
میرا سایہ تِری دیوار سے جا ملتا ہے

تیری آواز کہیں روشنی بن جاتی ہے
تیرا لہجہ کہیں مہکار سے جا ملتا ہے

چودھویں رات تِری زلف میں ڈھل جاتی ہے
چڑھتا سورج تِرے رخسار سے جا ملتا ہے

گرد بھی وسعتِ صحرا میں سمٹ جاتی ہے
راستہ کوچہ و بازار سے جا ملتا ہے

رام ہر چند کیٔ لوگ بچھڑ جاتے ہیں
.....قافلہ، قافلہ سالار سے جا ملتا ہے


Keheen Jungle Kaheen Darbaar Se Ja Milta Hai
Silsila Waqt Ka Talwaar Se Ja Milta Hai

Mein Jahan Bhi Hoon Magar Shehar Mein Din Dhaltey He
Mera Saya Teri Diwaar Se Ja Milta Hai

Teri Awaaz Kaheen Roshni Ban Jati Hai
Tera Lehja Kaheen Mehkaar Se Ja Milta Hai

Chohdwee'n Raat Teri Zulf Mein Dhal Jati Hai
Charrhta Sooraj Teray Rukhsaar Se Ja Milta Hai

Gard Bhi Wus'at-E-Sehra Mein Simat Jati Hai
Raasta Koocha-O-Bazaar Se Ja Milta Hai

Raam Har Chund Kai Log Bicharr Jatay Hein
Qaafla, Qaafla Salaar Se Ja Milta Hai ...........

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

5 comments:

Thanks For Nice Comments.