Friday, 10 October 2014

Pin It

Widgets

Aik Aansoo Nahi Hai Ronay Ko

Best Aansoo Poetry

اور کیا رہ گیا ہے ہونے کو
ایک آنسو نہیں ہے رونے کو

خواب اچھے رہیں گے اندیکھے
خاک اچھی رہے گی سونے کو

یہ مہ و سال چند باقی ہیں
اور کچھ بھی نہیں ہے کھونے کو

نارسائی کا رنج لائے ہیں
تیرے دل میں کہیں سمونے کو

چشم_نم ، چار اشک اور ادھر
داغ اک رہ گیا ہے دھونے کو

بیٹھنے کو جگہ نہیں ملتی
کیا کریں اوڑھنے بچھونے کو

تو کہیں بیٹھ اور حکم چلا
ہم تو ہیں تیرا بوجھ ڈھونے کو

یاد بھی تیری مٹ گیی دل سے
....اور کیا رہ گیا ہے ہونے کو
Aur Kia Reh Gaya Hai Honey Ko
Aik Aansoo Nahi Hai Roney Ko

Khuwaab Achay Rahein Gay Un Daikhey
Khaak Achi Rahey Gi Soney Ko

Yeh May Wa-Saal Chand Baqi Hein
Aur Kuch Bhi Nahi Hai Khoney Ko

Naar Saai Ka Ranj Laaey Hein
Terey Dil Mein Kaheen Samoney Ko

Chashm-E-Num , Chaar Ashk Aur Idhar
Daagh Ik Reh Gaya Hai Dhoney Ko

Baithney Ko Jaga Nahi Milti
Kia Karen Orrhney Bichoney Ko

Tu Kaheen Baith Aur Hukum Chala
Hum Tou Hein Tera Bojh Dhoney Ko

Yaad Bhi Teri Mitt Gai Dil Se
Aur Kia Reh Gaya Hai Honey Ko.....
  
Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

6 comments:


  1. بیٹھنے کو جگہ نہیں ملتی
    کیا کریں اوڑھنے بچھونے کو

    Awesome

    ReplyDelete
  2. خواب اچھے رہیں گے اندیکھے
    خاک اچھی رہے گی سونے کو

    ReplyDelete

Thanks For Nice Comments.