Sunday, 26 October 2014

Pin It

Widgets

Bikharta Jism Meri Jaan Kitaab Kia Hoga

Mohsin Naqvi Poetry

بکھرتا جسم میری جاں کتاب کیا ھو گا؟
تمہارے نام سے اب انتساب کیا ھو گا؟

تم اپنی نیند بھرے شہر میں تلاش کرو
جو آنکھ راکھ ھوئی اس میں خواب کیا ھو گا؟

وہ میری تہمتیں اپنے بدن پہ کیوں اوڑھے
میرے گناہ کا اس کو ثواب کیا ھو گا؟

ہوا میں اس کی مسافت،زمیں پہ میرا سفر
وہ شہسوار میرا ہمرکاب کیا ھو گا؟

اسے گنوا کے میں اب کس کے خدوخال پڑھوں
اب اس سے بڑھ کر میرا انتخاب کیا ھو گا؟

ملے گا ڈوبنے والوں کو اجر جو بھی ملے
سمندروں کا مگر احتساب کیا ھو گا؟

ہمارے بعد ہمیں یاد کیوں کرے گا کوئی
ہوا کا نقش سر سطع آب کیا ھو گا؟

بکھرتے ٹوٹتے محسن کو اور کیا کہنا
.....خراب اور وہ خانہ خراب کیا ھو گا

Bikharta Jism Meri Jaan Kitaab Kia Hoga
Tumhare Naam Se Ab Intasaab Kia Hoga

Tum Apni Neend Bharay Shehar Mein Talaash Karo
Jo Aankh Raakh Hui Us Mein Khuwab Kia Hoga

Woh Meri Tohmatein Apne Badan Pe Kiun Orrahy
Merey Gunah Ka Us Ko Sawaab Kia Hoga

Hawa Mein Uski Musafat , Zameen Pe Mera Safar
Woh Sheh-Sawaar Mera Hum-Rakaab Kia Hoga

Usay Ganwa K Mein Ab Kis Khad-O-Khaal Parrhoon
Ab Us Se Barrh Kar Mera Intakhaab Kia Hoga

Milay Ga Doobne Walon Ko Ajar Jo Bhi Milay
Samandaron Ka Magar Ehtsaab Kia Hoga

Hamare Baad Hame Yaad Kiun Karay Ga Koi
Hawa Ka Naqsh Sar Sath-E-Aab Kia Hoga

Bikhartey Toot'tey Mohsin Ko Aur Kia Kehna
Kharab Aur Khana Kharaab Kia Hoga .............


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

4 comments:

Thanks For Nice Comments.