Monday, 6 October 2014

Pin It

Widgets

Tehreer Khoon Ki Hai Tou Jumlay Kamaal K

Best Love Poetry

تحریر خون کی ہے تو جملے کمال كے
کاغذ پہ رکھ دیا ہے  کلیجہ نکال كے

اس کا خوف دل سے نا جائیگا کبھی
کیوں آستین میں سانپوں کو رکھا ہے پالكے

پتھر گر ہمارا دِل ہے تو الزام ہی سہی
نازک تمھارا دِل ہے تو رکھیے سنبھال كے

کوئی ہم جیسا لاچار ملے گا نہیں تمھیں
...دینا ہے دِل تو دیجیئے مگر دیکھ بھال كے
Tehreer Khoon Ki Hai Tou Jumlay Kamaal K
Kaghaz Pay Rakh Diya Hai Kalija Nikaal K

Us Ka Khof Dil Se Na Jaey Ga Kabhi
Kiun Aastee'n Mein Saanpo'n Ko Rakha Hai Paal K

Pathar Gar Hamara Dil Hai Tou Ilzaam He Sahi
Nazuk Tumhara Dil Hai Tou Rakhye Sanbhaal K

Koi Hum Jaisa La-Chaar Milay Ga Nahi Tumeh
Dena Hai Dil Tou Dijiye Magar Daikh Bhaal K....

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

6 comments:

Thanks For Nice Comments.