Saturday, 29 November 2014

Pin It

Widgets

Aab-E-Zam Zam Mein Agar Zehar Mila Sakta Hai


آبِ زم زم میں اگر زہر ملا سکتا ہے
موجِ نفرت میں کہیں تک بھی وہ جا سکتا ہے

کر کے وہ پھول سے بچّوں کو لہو میں لت پت
اُن کے ملبوس کی دستار بنا سکتا ہے

دے نہیں سکتا کسی طفل کو ٹافی لیکن
اُس پہ پستول کی گولی وہ چلا سکتا ہے

بم سکولوں پہ گراتا ہے وہ جن ہاتھوں سے
حیف! قرآں انہی ہاتھوں میں اٹھا سکتا ہے

اُس کے نزدیک مثالی وہی مومن ہے کہ جو
ٹکڑے جسموں کے مساجد میں اڑا سکتا ہے

اُس کی خصلت پہ یہ حیرت سے درندوں نے کہا
وَحش ایسا ' کسی انساں میں بھی آسکتا ہے

اُس کے سینے میں تو احساس کا جگنو بھی نہیں
وہ فقط جلتے چراغوں کو بجھا سکتا ہے

اُس کا یہ وہم ہے' بس وہم سراسر کہ کبھی
 ....پرچمِ عشق ہمارا وہ جھکا سکتا ہے

Aab-E-Zam Zam Mein Agar Zehar Mila Sakta Hai
Mouj-E-Nafrat Mein Kaheen Tak Bhi Woh Ja Sakta Hai

Kar K Woh Phool Se Bachon Ko Lahoo Mein Lat-Patt
Un K Malboos Ki Dastaar Bana Sakta Hai

De Nahi Sakta Kisi Tifal Ko Toffee Lekin
Us Pe Pistol Ki Goli Woh Chala Sakta Hai

Bum Schoolon Pe Girata Hai Woh Jin Hathon Se
Haif  Quran Unhee Hathon Mein Utha Sakta Hai

Us K Nazdeek Misali Wohi Momin Hai K Jo
Tukrrey Jismon K Masajid Mein Urra Sakta Hai

Uski Khaslat Pe Yeh Hairat Se Darindon Ne Kaha
Wehash Aisa Kisi Insaan Mein Bhi Aa Sakta Hai

Us K Seenay Mein Tou Ehsaas K Jugnu Bhi Nahi
Woh Faqat Jaltey Charagon Ko Bujha Sakta Hai

Uska Yeh Weham Hai, Bus Weham Sara-Sar K Kabhi
Parcham-E-Ishq Hamara Woh Jhuka Sakta Hai ........

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

5 comments:

Thanks For Nice Comments.