Wednesday, 5 November 2014

Pin It

Widgets

Mein Iss Liye Aangan Ka Shajar Kaat Raha Tha


Sad Urdu Ghazals

میں اس لیے آنگن کا شجر کاٹ رہا تھا
 وہ حبس تھا کمروں میں کہ گھر کاٹ رہا تھا

لوگوں کو یہ خدشہ تھا کہ بنیاد غلط ہے
دیوار کو برسات کا ڈر کاٹ رہا تھا

کانٹوں سے نہیں آبلہ پائی کو شکایت
تلوئو ں کو تو بے فیض سفر کاٹ رہا تھا

ہر شخص مجھے صورتِ اخبار اٹھا کر
 صفحات سے مطلب کی خبر کاٹ رہا تھا

کہنے کو تو یوں میری انا قید تھی لیکن
دستار کو اندر سے ہی سرکاٹ رہا تھا

شہکا ر کا ثانی ہی نہ بن جائے کہیں اور
 ...اس خوف سے وہ دست ِ ہنر کاٹ رہا تھا
Mein Iss Liye Aangan Ka Shajar Kaat Raha Tha
Woh Habs Tha Kamro'n Mein Ke'h Ghar Kaat Raha Tha

Logon Ko Yeh Khadsha Tha K Bunyad Galat Hai
Diwaar Ko Barsaat Ka Dar Kaat Raha Tha

Kaanton Se Nahi Aabla Paaie Ko Shikayat
Talwon Ko Tou Be-Faiz Safar Kaat Raha Tha

Har Shakhs Mujhe Soorat-E-Akhbaar Utha Kar
Safhaat Se Matlab Ki Khabar Kaat Raha Tha

Kehne Ko Tou Youn Meri Anaa Qaid Thi Lekin
Dastaar Ko Andar Se He Sar Kaat Raha Tha

Shehkaar Ka Saani He Na Ban Jaey Kaheen Aur
Iss Khof Se Woh Dast-E-Hunar Kaat Raha Tha....

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

7 comments:

Thanks For Nice Comments.