Sunday, 4 January 2015

Pin It

Widgets

Chhup K Tanhai Mein Ro Lein Gay

Great Sad Poetry


Chhup K Tanhai Mein Ro Lein Gay


سامنے سب کے نہ بولیں گے ہمارا کیا ہے
چُھپ کے تنہائی میں رو لیں گے ہمارا کیا ہے

گلشنِ عشق میں ہر پُھول تمہارا ہی سہی
ہم کوئی خار چبھو لیں گے ہمارا کیا ہے

عُمر بھر کون رہے ابرِ کرم کا محتاج
داغِ دل اشکوں سے دھو لیں گے ہمارا کیا ہے

ہاتھ آیا نہ اگر دستِ حنائی تیرا
اُنگلیاں خُوں میں ڈبو لیں گے ہمارا کیا ہے

تم نے محلوں کے علاوہ نہیں دیکھا کچھ بھی
ہم تو فٹ پاتھ پہ سو لیں گے ہمارا کیا ہے

اپنی منزل تو سرابوں کا سفر ہے باقی
..ہم کِسی راہ پہ ہو لیں گے ہمارا کیا ہے

Samney Sab K Na Bolein Gay Hamara Kia Hai
Chhup K Tanhai Mein Ro Lein Gay Hamara Kia Hai

Gulshan-E-Ishq Mein Har Phool Tumhara He Sahi
Hum Koi Khaar Chubho Lein Gay Hamara Kia Hai

Umar Bhar Kon Rahey Abr-E-Karam Ka Mohtaaj
Daag-E-Dil Ashkon Se Dho Lein Gay Hamara Kia Hai

Hath Aaya Na Agar Dast-E-Hinaai Tera
Ungliyan Khoon Mein Dubo Lein Gay Hamara Kia Hai

Tum Ne Mehlon K Ilawa'h Nahi Dekha Kuch Bhi
Hum Tou Foot Path Pay So Lein Gay Hamara Kia Hai

Apni Manzil Tou Saraabon Ka Safar Hai Baaqi
Hum Kisi Raah Pay Ho Lein Gay Hamara Kia Hai..

Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

5 comments:

Thanks For Nice Comments.