Saturday, 6 December 2014

Pin It

Widgets

Koi Diya He Nahi Tha Kisay Bujhati Hawa

Poetry 2015

بہُت اُداس تھی اِن طاقچوں سے جاتی ہَوا
 کوئی دیا ہی نہیں تھا کسے بُجھاتی ہَوا

مَیں چاہتا ہُوں تِرے بعد کی خموشی رہے
 گزر رہی ہے مگر کِھڑکیاں بَجاتی ہَوا

اِسی خیال سے ہم رات بھر نہیں سوئے
 نہ جانے کون سا اگلا قدم اُٹھاتی ہَوا

کسی پڑاو ٹھہَرنے کا نام لیتی نہیں
ہماری خاک یہاں سے وہاں اُڑاتی ہَوا

تمہارے بعد حویلی کے خالی کمروں میں
 ....بھٹک رہی ہے مِرے ساتھ سَرسراتی ہَوا
Bohat Udas Thi In Taaqchon Se Jati Hawa
Koi Diya He Nahi Tha Kisay Bujhati Hawa

Mein Chahta Hoon Terey Baad Ki Khamoshi Rahey
Guzar Rahi Hai Magar Khirrkiyaan Bajati Hawa

Isi Khayal Se Hum Raat Bhar Nahi Soey
Na Janey Konsa Agla Qadam Uthati Hawa

Kisi Parrao Theharney Ka Naam Leti Nahi
Hamari Khaak Yahan Se Wahan Urrati Hawa

Tumhare Baad Haweli K Khali Kamron Mein
Bhatak Rahi Hai Merey Sath Sar-Saraati Hawa...


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

6 comments:

Thanks For Nice Comments.