Tuesday, 6 January 2015

Pin It

Widgets

Zard Mosam Ki Aziyat Bhi Uthane Ka Nahi

  
Mosam Urdu Shyri

 زرد موسم کی اذّیت بھی اُٹھانے کا نہیں
میں درختوں کی جگہ خود کو لگانے کا نہیں

اب ترے ساتھ  تعلق کی گزرگاہوں  پر
وقت مشکل ہے،مگرہاتھ چھڑانے کا نہیں

جادہء صبر مرے عشق کی زینت ٹھہرا
سومیں آنکھوں سےکوئی اشک بہانےکا نہیں

قریہ سبز سے آتی ہوئی پر کیف ہوا
طاق پر رکھا مرا دیپ بجھانے کا نہیں

میں ہدف ہوں ،مگر اس آنکھ کے پیکان کا ہوں
دیکھ  دنیا میں کسی اور نشانے کا نہیں

چل رہا تھا تو سبھی لوگ مرے بازو تھے
گر پڑا ہوں تو کوئ دوست اٹھانے کا نہیں

عشق ہے اور رگ و پے میں سمایا ہے سعید
اور یہ روگ مری جان سے جانے کا نہیں

Zard Mosam Ki Aziyat Bhi Uthaney Ka Nahi
Mein Darakhton Ki Jagah Khud Ko Laganey Ka Nahi

Ab Terey Sath Ta'alluq Ki Guzar Gaahon Par
Waqt Mushkil Hai, Magar Hath Churraney Ka Nahi

Jadha-E-Sabar Merey Ishq Ki Zeenat Thehra
So Mein Aankhon Se Koi Ashk Bahaney Ka Nahi

Qarya-E-Sabz Se Aati Hui Pur Qaif Hawa
Taaq Par Rakha Mera Deep Bujhaney Ka Nahi

Mein Hadaf Hoon Magar Us Aankh K Pekan Ka Hoon
Daikh Dunya Mein Kisi Aur Thikaney Ka Nahi

Chal Raha Tha Tou Sabhi Log Merey Bazoo Thay
Gir Parra Hoon Tou Koi Dost Uthaney Ka Nahi

Ishq Hai Aur Rag-O-Pay Mein Samaya Hai Saeed
Aur Yeh Rog Meri Jaan Se Janey Ka Nahi...


Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It  
Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

2 comments:

Thanks For Nice Comments.