Tuesday, 21 January 2014

Pin It

Widgets

Kia Kaheiye Keh Ab Uski Sada Tak Nahi Aati

Sada Tak Nahi

کیا کہیے کہ اب اس کی صدا تک نہیں آتی
اونچی ہوں فصیلیں تو ہوا تک نہیں آتی

شاید ہی کوئی آسکے اس موڑ سے آگے
اس موڑ سے آگے تو قضا تک نہیں آتی

وہ گل نہ رہے نکبتِ گُل خاک ملے گی
یہ سوچ کے گلشن میں صبا تک نہیں آتی

اس شورِ تلاطم میں کوئی کس کو پکارے
کانوں میں یہاں اپنی صدا تک نہیں آتی

خوددار ہوں کیوں آؤں درِ ابلِ کرم پر
کھیتی کبھی خود چل کے گھٹا تک نہیں آتی

اس دشت میں قدموں کے نشاں ڈھونڈ رہے ہو
پیڑوں سے جہاں چھن کےضیا تک نہیں آتی

یا جاتے ہوئے مجھ سے لپٹ جاتی تھیں شاخیں
یا میرے بلانے سے صبا تک نہیں آتی

کیا خشک ہوا روشنیوں کا وہ سمندر
اب کوئی کرن آبلہ پا تک نہیں آتی

چھپ چھپ کے سدا جھانکتی ہیں خلوتِ گل میں
مہتاب کی کرنوں کو حیا تک نہیں آتی

یہ کون بتائے عدم آباد ہے کیسا
ٹوٹی ہوئی قبروں سےصدا تک نہیں آتی

بہتر ہے پلٹ جاؤ سیہ خانۂ غم سے
...اس سرد گُپھا میں تو ہوا تک نہیں آتی


Kia Kaheiye Keh Ab Uski Sada Tak Nahi Aati
Oonchi Hon Faseelein Tou Hawa Tak Nahi Aati

Shayad He Koi Aa Sakay Is Morr Se Aagay
Is Morr Se Aagay Tou Qaza Tak Nahi Aati

Woh Gul Na Rahey Nikbat-e-Gul Khaak Milay Gi
Yeh Soch K Gulshan Mein Saba Tak Nahi Aati

Is Shor-e-Talatum Mein Koi Kis Ko Pukarey
Kaano Mein Yahan Apni Sada Tak Nahi Aati

Khuddaar Hoon Kiun Aaon Dar-e-Abl-e-Karam Par
Khailti Kabhi Khud Chal Kar Ghata Tak Nahi Aati

Us Dasht Mein pairron K Nishaan Dhoond Rahey Ho
Pairron Se Jahan Chhan K Ziya Tak Nahi Aati

Ya Jati Hui Mujh Se Lipat Jati Thi Shakhein
Ya Meray Bulaney Se Saba Tak Nahi Aati

Kia Khushk Hua Sroshniyon Ka Woh Samandar
Ab Koi Kiran Aabla Paa Tak Nahi Aati

Chhup Chhup K Sada Jhankti Hai Khalwat-e-Gul Mein
Mehtaab Ki Kirno Ko Haya Tak Nahi Aati

Yeh Kon Bataey Adam Abaad Hai Kaisa
Tooti Hui Qabron Se Sada Tak Nahi Aati

Behtar Hai Palat Jao Siyah Khan-e-Gham Se
Is Ghupa Mein Tou Hawa Tak Nahi Aati…………..
  

 Please Do Click g+1 Button If You Liked The Post  & Share It 

Get Free Updates in your Inbox
Follow us on:
facebook twitter gplus pinterest rss

1 comment:

Thanks For Nice Comments.